قرآن پاک کی برکت || امام شافعی رحمت اللہ تعالی علیہ اور امام احمد بن حنبل رحمۃ اللہ تعالی علیہ

 

ایک دفعہ امام شافعی رحمت اللہ تعالی علیہ اپنے شاگرد امام احمد بن حنبل رحمۃ اللہ تعالی علیہ کے گھر تشریف لے کے گئے. تو ان کی صاحبزادی نے اپنے والد گرامی کے استاد محترم کے لیے کهانا بنانا شروع کیا .انہوں نے اپنی بیٹی کو بتایا کہ میرے استاد کے اندر دو خوبیاں  ہیں ایک وہ کھانا کم کھاتے ہیں ،دوسرا وہ تہجد کی  نماز کبھی  بھی نہیں چھوڑتے. تو انہوں نے ان کے کمرے کے اندر کھانا اور ساتھ ایک برتن کے اندر پانی رکھ دیا تہجد کی نماز پڑھنے کے لیے وضو کرنے کے لیے پانی رکھ دیا .وہاں پہ صبح کے وقت جب  امام احمد بن حنبل کمرے کے اندرگئے تو دیکھا کہ پانی جوں کا توں  ویسے ہی پڑا ہوا ہے اور کھانا معمول سے زیادہ کھایا ہوا .انہوں نے بڑے تعجب سے پوچھا استاد یہ کیا ماجرہ ہے؟

 تو امام شافعی نے پوچھا پہلے مجھے یہ بتاؤ کھانا کس نے پکایا تھا ؟

کہا میری بیٹی نے پکایا .

انہوں نے پوچھا کہ کیا اپ کی بیٹی حافظ قرآن ہے؟

 تو انہوں نے کہا جی وہ حافظ قرآن ہے.

 کہا کھانا پکانے کا معمول کیا ہے؟

 تو وہ فرماتے ہیں کہ جب میری بیٹی کھانا پکانے لگتی ہے تو ساتھ ساتھ قرآن حکیم کی تلاوت شروع کر دیتی ہے ،ساتھ ساتھ کھانا پکتا ہے ساتھ ساتھ وہ تلاوت کرتی رہتی ہیں اور عمومی طور پہ ایسا ہوتا ہے کہ کھانا پکتے پکتے وہ دو تین پاروں کی تلاوت کر لیتی ہیں .

تو امام شافعی نے کہا کہ وہ کھانا اتنا لذیذ تھا کہ میں نے اس کا ایک لقمہ لیا میرا دل کیا میں دوسرا لقمہ لوں ،دوسرا لقمہ لیا میرا دل کیا تیسرا لقمہ لو .اس طرح میں معمول سے زیادہ کھانا میں نے کھا لیا اور اس کی برکت ایسی ہوئی میں ساری رات علم حدیث پہ کام کرتا رہا اور پھر میں نے اسی وضو کے ساتھ تہجد بھی پڑھی اور صبح کی نماز بھی پڑھی ہے .

یہ قرآ ن کی برکت ہے. ہمارے ہاں کلچر ہوا کرتا تھا صبح کی آ ذان کے وقت صبح ہو جاتی تھی .سارا گھر اٹھ جاتا تھا ،نماز کا اہتمام کیا جاتا تھا ،قرآن حکیم کی تلاوتوں سے گونجتا تھا گھر ،چھوٹے چھوٹے بچے اٹھتے تھے اپنی ماؤں کی تلاوت کی آواز سن کے آلارم کی آواز سن کے نہیں. پھر یوں ہوا کہ ہم ماڈرن ہو گئے وہ وقت جس وقت رزق دینے والے فرشتے آتے ہیں ہم سوئے ہوئے ہوتے ہیں اور پھر تنگی رزق کا گلا کرتے ہیں.

 لوٹ آؤ اسی کلچر کی طرف قرآن حکیم کی تلاوت شروع کر دو قرآن حکیم کو ایک بار پھر سے تھام لو اللہ رب العزت کی ذات زبان پہ تاثیر عطا کرے گی، چہرے پہ جازبیت عطا کرے  گی ،انکزائٹی اور ڈپریشن کو دور بھگا دے گی، صحت و تندرستی عطا کرے گی ،اولاد صالح عطا کرے گی، دنیا کی ہر طرح کے غم اور پریشانیاں تم سے دور لے جائے گی ،رزق وہاں سے آئے گا جہاں سے تمہیں گمان نہیں ہوگا. قرآن حکیم کی طرف واپس لوٹ آؤ  قرآن کی بڑی برکتیں ہیں۔۔۔۔۔۔

1 thought on “قرآن پاک کی برکت || امام شافعی رحمت اللہ تعالی علیہ اور امام احمد بن حنبل رحمۃ اللہ تعالی علیہ”

Leave a Comment