Donkeys should never be carried to the top or else || Urdu moral story

Donkeys should never be carried to the top or else
کبھی بھی گدھے کو مقام
بالا تک نہیں لے جانا چاہیے ورنہ 


ایک دفعہ ملا نصیر الدین نے ایک اچھا سا گدھا لیا اسے گھر لا کر
نہلایا ،دھلایا، گھمایا اس کی خوب خاطر مدارت کی پھر اللہ جانے ملا کو کیا سوجھی
اس نے گدھے کو اپنے کندھے پر لٹکا کر سیڑھی کے  ذریعےاسے چھت پر لے گئے۔ پہلے
تو گدھا اونچا منصب پا کر بہت خوش ہوا پھر اچانک اسے اتنی بلندی اور اپنے گدھا
ہونے کا احساس ہوا تو وہ گھبرا گیا ۔اس نے چھت کے ہر ہر کونے تک دوڑ لگائی۔ بالآخر
کوئی راستہ نہ پا کر اس نے اپنے کھروں سے چھت کو ادھیڑنا شروع کر دیا ۔ آخر کار اس
نے چھید کر کر کے اس میں بڑے بڑے سوراخ بنا دیے اور خود دھڑام سے نیچے گر گیا اور
چاروں ٹانگیں تڑوا بیٹھا، اوپر سے بچی کھچی چھت بھی  اس کے اوپر آگئی۔

 محلے داراکٹھے ہو گئے، ملا سے ہمدردی جتانے لگے تو ملا نے کہا ناں بھائی اس میں بھی میرے لیے بڑا سبق ہے۔ تو لوگوں نے پوچھا کہ وہ کیا تو ملا کہنے لگے کہ 

 کبھی بھی گدھے کو مقام بالا تک نہیں لے جانا چاہیے ورنہ وہ اپنا نقصان تو کرائے گا ساتھ میں مقام بالا کا بھی ستیاناس کرے گا۔۔۔۔۔۔۔ 😄😄😁😁😀😀😎

Leave a Comment